’بی جے پی حکومت کی بداعمالیوں کا پردہ فاش‘، کانگریس کا برسراقتدار طبقہ پر حملہ


کانگریس صدر ملکارجن کھڑگے نے اپنے بیان میں کہا کہ ’’ملک کی ہر ایک خاتون کو آج پتہ چل گیا ہے کہ بی جے پی کی خاتون مخالف ذہنیت کتنی نفرت انگیز اور آلودہ ہے۔‘‘

ملکارجن کھڑگے، تصویر @INCIndia

user

بلقیس بانو اجتماعی عصمت دری معاملہ میں قصوروار 11 افراد کی رِہائی کے فیصلہ کو آج سپریم کورٹ نے جیسے ہی پلٹا، گجرات حکومت کے ساتھ ساتھ مرکز کی مودی حکومت کے خلاف بھی اپوزیشن لیڈران کا حملہ شروع ہو گیا۔ خصوصاً کانگریس نے سپریم کورٹ کے ذریعہ گجرات حکومت کے فیصلہ کو طاقت کا غلط استعمال ٹھہرائے جانے کے بعد برسراقتدار طبقہ کو شدید تنقید کا نشانہ بنایا ہے۔

کانگریس صدر ملکارجن کھڑگے نے سپریم کورٹ کا فیصلہ سامنے آنے کے بعد سوشل میڈیا پلیٹ فارم ’ایکس‘ پر پوسٹ کرتے ہوئے لکھا ہے کہ ’’بیٹی بچاؤ بنا قصوروار بچاؤ۔ بلقیس بانو معاملے میں عزت مآب سپریم کورٹ کا فیصلہ انصاف کی بحالی ہے۔ یہ مودی حکومت کی وزارت داخلہ اور گجرات حکومت کی بداعمالیوں کا پردہ فاش کرتا ہے۔‘‘ ساتھ ہی کھڑگے نے یہ بھی لکھا کہ ’’یہ ظاہر کرتا ہے کہ انتخاب جیتنے کے لیے کس طرح بی جے پی ایک خاتون کو انصاف سے کوسوں دور رکھ سکتی ہے۔ ملک کی ہر ایک خاتون کو آج پتہ چل گیا ہے کہ بی جے پی کی خاتون مخالف ذہنیت کتنی نفرت انگیز اور آلودہ ہے۔ بلقیس بانو نے جو جدوجہد کی، وہ بے کار نہیں گئی۔‘‘

بلقیس بانو معاملے میں سپریم کورٹ کا فیصلہ سامنے آنے کے بعد کانگریس رکن پارلیمنٹ ڈاکٹر ابھشیک منو سنگھوی اور مہیلا کانگریس صدر الکا لامبا نے پارٹی ہیڈکوارٹر میں ایک پریس کانفرنس سے بھی خطاب کیا۔ اس دوران ابھشیک منو سنگھوی نے کہا کہ ’’برسراقتدار طبقہ نے جس طرح زانیوں کو بچانے کا طریقہ اختیار کیا تھا، اب انھیں منھ چھپانے کی جگہ نہیں مل رہی ہے۔ بی جے پی کے سبھی جملے بے نقاب ہو گئے ہیں اور بی جے پی کا اصلی چہرہ سامنے آ گیا ہے۔‘‘ انھوں نے مزید کہا کہ ’’جیل میں رہتے ہوئے بھی ان سبھی قصورواروں کو بی جے پی کی مرکزی اور ریاستی حکومت نے کافی سہولتیں دے رکھی تھیں۔ لیکن گناہ اتنی آسانی سے نہ نمٹتا ہے اور نہ ہی آسانی سے چھپتا ہے۔‘‘

سنگھوی نے پریس کانفرنس میں واضح لفظوں میں کہا کہ بلقیس بانو معاملے میں کئی وکلا نے حکومت کی طرف سے عدالت میں آ کر بار بار وقت مانگا۔ جج کو یہاں تک کہنا پڑا کہ شاید آپ میرے ریٹائر ہونے کا انتظار کر رہے ہیں۔ یہ کتنی شرمناک بات ہے۔ لیکن وزیر اعظم مودی نے اپنی حکومت کے اس رویے پر ایک لفظ نہیں بولا۔ بلقیس بانو جیسا معاملہ سماج کے لیے خوفناک ہے، لیکن پھر بھی ان قصورواروں کو رِہا کر دیا گیا۔ اس معاملے میں گجرات حکومت کا ارادۂ بد ظاہر ہے، لیکن مرکزی حکومت بھی اپنا منھ نہیں چھپا سکتی کیونکہ انھوں نے خود 11 قصورواروں کی رِہائی کو منظوری دی تھی۔

اس موقع پر مہیلا کانگریس صدر الکا لامبا نے کہا کہ جب ملک کے وزیر اعظم 15 اگست 2022 کو لال قلعہ سے ’بیٹی بچاؤ‘ کا نعرہ اور آزادی کا ’امرت مہوتسو‘ منانے کا نعرہ دے رہے تھے، تو دوسری طرف گجرات میں بلقیس بانو کے زانیوں کی رِہائی ہو رہی تھی۔ پہلے ان زانیوں کا استقبال وی ایچ پی کے دفتر میں ہوتا ہے اور پھر بعد بی جے پی اراکین پارلیمنٹ و اراکین اسمبلی ان کے ساتھ اسٹیج شیئر کرتے ہیں۔ سپریم کورٹ کے تازہ فیصلے کے بعد وزیر اعظم مودی اور بی جے پی لیڈروں کو ملک کی کروڑوں بیٹیوں سے معافی مانگنی چاہیے۔ بی جے پی آج بے نقاب ہو چکی ہے۔

الکلا لامبا نے پریس کانفرنس میں یہ بھی کہا کہ بی جے پی حکومت نے پہلے بھی اقتدار، تعداد اور طاقت کے دم پر سپریم کورٹ کے فیصلوں کو آرڈیننس سے پارلیمنٹ میں پلٹنے کا کام کیا ہے۔ اب دیکھنا یہ ہے کہ سپریم کورٹ نے جو حکم دیا ہے کہ دو ہفتوں کے اندر بلقیس بانو کے زانیوں کو جیل واپس بھیج دیا جائے، ایسے میں کیا یہ زانی واپس جیل جائیں گے۔ یا بی جے پی پھر اقتدار اور تعداد کی طاقت پر سپریم کورٹ کا فیصلہ پلٹ دے گی اور ہم ان زانیوں کو باہر گھومتے ہوئے دیکھیں گے۔ کانگریس لیڈر نے مزید کہا کہ کانگریس پورے عزم کے ساتھ اس لڑائی کو مضبوطی کے ساتھ قانونی، سماجی و سیاسی طور سے لڑنے کے لیے تیار ہے۔

Follow us: Facebook, Twitter, Google News

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔


;

Leave A Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *