زلزلے اور سونامی کی آماجگاہ


یکم جنوری کے زلزلے کے مرکز کے قریب ترین جوہری پاور پلانٹ شیکا میں ہے۔ یہاں حفاظتی جانچ کے لیے ری ایکٹر بند تھے۔ لیکن اس کے آپریٹر نے معمولی مسائل اور نقصانات کا ذکر کرتے ہوئے یقین دلایا کہ ایسی کوئی چیز نہیں جو تابکاری کے اخراج کا سبب بنے۔

نیگاتا پریفیکچر میں کاشی وازاکی-کاریوا نیوکلیئر پاور پلانٹ ہے۔ بجلی کی صلاحیت کے لحاظ سے یہ دنیا کا سب سے بڑا جوہری پاور پلانٹ ہے۔ زلزلے کی وجہ سے اس کے 2 ری ایکٹروں کے ایندھن کے تالابوں سے پانی بہنے لگا۔ اس کے آپریٹر ٹوکیو الیکٹرک پاور، جو کہ تباہ شدہ فوکوشیما پلانٹ کے لیے بھی ذمہ دار ہے، نے کہا کہ اس میں کوئی نقصان یا رساو نہیں ہے۔ ٹوکیو الیکٹرک پاور نے حال ہی میں نیگاتا پلانٹ کو دوبارہ شروع کرنے کی اجازت حاصل کی ہے، جو 2011 کے زلزلے کے بعد سے جزوی طور پر بند تھا ۔

Leave A Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *